<
Breaking News Pakistan - بریکنگ نیوز پاکستان
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

ایف جی ایمپلائز ہائوسنگ فائونڈیشن کو اتھارٹی میں تبدیل کرنیکا فیصلہ

وفاقی حکومت نے وزیرا عظم کے نیا پاکستان ہائوسنگ پروگرام کے تحت 50لاکھ گھروں کی تعمیر کیلئے فیڈرل گورنمنٹ ایمپلائز ہائوسنگ فائونڈیشن کو اتھارٹی میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے
اسلام آباد (رپورٹ : الماس حید رنقوی )وفاقی حکومت نے وزیرا عظم کے نیا پاکستان ہائوسنگ پروگرام کے تحت 50لاکھ گھروں کی تعمیر کیلئے فیڈرل گورنمنٹ ایمپلائز ہائوسنگ فائونڈیشن کو اتھارٹی میں تبدیل کرنے کا فیصلہ کیا ہے ، ہائوسنگ فائونڈیشن کو زمین کے حصول ، منصوبے کے آغاز اور لے ٓائوٹ پلان کی منظوری کیلئے دیگر انضباطی اداروں، ترقیاتی ادارے اور ضلعی انتظامیہ پر انحصار کے باعث منصوبوں پر عملدرآمد میں تاخیر کا سامنا کرنا پڑتا ہے ، اس کیلئے قانون سازی کا عمل شروع کیا گیا ہے ، حکومت کی کوشش ہے کہ جلد از جلد بل ایوان بالا کے بعد قومی اسمبلی سے منظور کرایا جائے تاکہ منصوبے پر تیز تر عملدرآمد کو یقینی بنایا جاسکے ، انتہائی باوثوق ذرائع کے مطابق فیڈرل گورنمنٹ ایمپلائز ہائوسنگ فائونڈ یشن جو ایک پبلک لمیٹڈ کمپنی ہے ، کمپنیز آرڈیننس 1984کی دفعہ 42کے تحت ایس ای سی پی کے ساتھ رجسٹرڈ ہے اور وزارت برائے مکانات و تعمیرات کے ماتحت کام کر رہی ہے ، ہائوسنگ فائونڈیشن میں سرکاری اور دیگر مخصوص گروپس کے ملازمین کو بغیر نفع یا نقصان کے قابل ادائیگی قیمت پر رہائشی سہولیات فراہم کی جاتی ہیں ،ہائوسنگ فائونڈیشن کا دائرہ کار اسلام آباد ، راولپنڈی اور کراچی کے منصوبہ جات کے ساتھ پورے پاکستان تک ہے ، وزیر اعظم کے نیا پاکستان ہائوسنگ پروگرام کے تحت اسلام آباد اور پاکستان بھر میں نئے منصو بہ جات شروع کرنے کیلئے ذمہ داریاں بڑھ جائیں گی اس لئے اسے مزید اختیارات د ئیے جارہے ہیں ، ذرائع کا کہنا ہے کہ قانون سازی کا جواز پیش کرتے ہوئے حکومت کی جانب سے کہا گیاہے کہ ہائوسنگ فائونڈیشن کو مجاز ادارے کی حیثیت دئیے بغیر 50لاکھ گھروں کی تعمیر کا خواب شرمند تعبیر ہوتا نظر نہیں آرہا ہے ۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More