<
Breaking News Pakistan - بریکنگ نیوز پاکستان
پاکستان، سیاست، کھیل، بزنس، تفریح، تعلیم، صحت، طرز زندگی ... کے بارے میں تازہ ترین خبریں

راولپنڈی کنٹونمنٹ بورڈ فوڈ سیکشن کی دو بڑی کاروائیاں پہلی 7 میں مضر صحت گوشت پکڑا دوسری جعلی کیچ اپ کی فیکٹری

کیچ اپ کی آفیشیل پریس ریلیز جاری گوشت کی خبر رات گئے تک دبا کے رکھی گئی، گوشت مالکان کے حوالے باقی افسران کے گھر منتقل، ذرائع

اہلیان کینٹ کی شکایت سارارمضان ہر گھر میں سموسوں، پکوڑوں اور کچوروں کے ساتھ کیچ اپ کا کھلا استعمال تھا تو انکو فیکٹری کیوں نظر نہیں آسکی اور اب پکڑ لی، اہلیان کینٹ

ترجمان ثاقب رشید کا نمبر دینے سے اسسٹنٹ علی کا انکار حقائق پر پردے ڈالنے کی کوش ہے، متعدد کوششوں کے بعد بھی رابطہ نا ہو سکا کوئی بھی چاہے تو موقف دے سکتا ہے، ادارہ

راولپنڈی (نامہ نگار خصوصی) راولپنڈی کنٹونمنٹ بورڈ کے فوڈ سیکشن کی جانب سے مختلف علاقوں سے گزشتہ روز ڈپارٹمنٹ کے ملازمین کے مطابق سات سے آٹھ من گوشت کو مضر صحت قرار دیتے ہوئے قبضے میں لیکر دفتر پہنچا دیا گیا تھا جس کے بعد گوشت کے مالکان کی دفتر میں لمبی قطاریں لگ گئیں اور ذرائع ابلاغ کے نمائندگان کی جانب سے تفصیلات پوچھی جانے پر پہلے فوڈ انچارج جاوید منظر عام سے غائب ہوئے اور انہوں نے فون اٹھانا بند کر دیا اسکے بعد میٹ اینڈ ملک کے انچارج رانا شعیب عظیم سلیمانی ٹو پی پہن کر غائب ہو گئے اور ترجمان کی سیٹ پت تعینات ثاقب رشید سے موقف کیلئے رابطہ کرنے پر دوسری جانب سے پی ٹی سی ایل کے نمبر پر بات کرنے والے ملازم نے انکا ایڈیشنل سی او کے ساتھ میٹنگ میں ہونے کا بتا کر تین بارفون بند کر دیا اور کٹنگ برانچ اور پریس ریلیز ڈیپارٹمنٹ سے علی نا می ملازم سے جب اتنی بڑی کاروائی کی اطلاعت فراہم نا کرنے کے حوالے سے پوچھا گیا تو انہوں نے لا عملی کا ظہار کرتے ہوئے متعلقہ ڈیپارٹمنٹ کے افسران سے رابطے کا راستہ دیکھا دیا جوکہ پہلے ہی منظر عام سے غائب ہو چکے تھے اور ثاقب رشید کا موبائل نمبر جوکہ ترجمان کی سیٹ پر فائز ہیں اور انکا نمبر ہر خاص و عام کو دیا جانا چاہیے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ مجھ کو نمبر دینے کی اجازت نہیں۔ ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے براہ راست رابطے میں رہنے والے ملازمین کے اس غیر ذمہ دارانہ بیان سے ثابت ہوتا ہے کہ راولپنڈی کنٹونمنٹ بورڈ کی دال میں کالا نہیں بلکہ پوری دال ہی شاید کالی ہے۔ اس ضمن میں کنٹونمنٹ بورڈ کے اندرونی ذرائع کا دعویٰ ہے کہ کیونکہ گوشت کے مالکان فوری طور پر دفتر پہنچ گئے تھے اسلیے مبینہ مک مکا کے بعد گوشت انکو واپس کر دیا گیا اور اس گوشت کا ایک حصہ مبینہ افسران کے گھروں میں انکی بیگمات کو راضی کرنے کیلئے پہچا دیا گیا ہے اور شاید یہی وجہ ہے کہ کنٹونمنٹ بورڈ کے علاقوں سے اتنی بڑی تعداد میں مضر صحت کے الزام میں پکڑے جانے والے گوشت کی تفصیلات بتانے سے عملہ صبح دس بجے سے شام ساڑھے چھ بجے تک گریزاں رہا۔ یاد ہے کہ رمضان المبارک کے مہینے میں جب ہر گھر میں پکوڑوں، سموسوں اور کچوریوں کے ساتھ کیچپ کا کھلا استعمال کیا جاتا ہے اس وقت کسی بھی فوڈ سیکشن کے عملے کو جعلی کیچ اپ کی فیکٹری نہیں نظر آئی اور مضان المبارک کے گزرتے ہی ایک بڑی کاروائی کیے جانے کا بتا کر داد سمیٹنے کیلئے باقائدہ طور پر پریس ریلیز چلا دی گئی اہلیان کینٹ کا کہنا ہے کہ یہ کاروائی رمضان المبارک میں کیوں نہیں کی گئی اس ضمن میں بہت کوشش کے بعد بھی کسی بھی ذمہ دار سے رابطہ نہیں ہو سکا لیکن اگر کوئی اب بھی حقائق بتانے کا اب بھی خواہش مند ہوا تو اسکے موقف کو ادارہ اپنی غیر جانب دارانہ پالیسی کے مطابق مناسب جگہ فراہم کرے گا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments
Loading...

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More